حمد از عتیق احمد جاذب، تشریح، سوالات و جوابات

Back to: Model Darsi Kitab Urdu Class 8 | Chapterwise Notes

نظم “حمد” از “عتیق احمد جاذب”

اشعار کی تشریح:
ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سےسورج کے اجالوں سے، فضاؤں سے ، خلا سےچاند اور ستاروں کی چمک اور ضیا سےجنگل کی خموشی سے، پہاڑوں کی انا سےپرہول سمندر سے ، پراسرار گھٹا سےبجلی کے چمکنے سے ، کڑکنے کی صدا سےمٹی کے خزانوں سے، اناجوں سے، غذا سےبرسات سے، طوفان سے، پانی سے، ہوا سےہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
یہ اشعار حمدیہ نظم سے لیے گئے ہیں۔اس بںد میں شاعر اللہ کی ذات کو مخاطب کرتے ہوئے کہتا ہے کہ اے کریم رب ہم نے تمہیں تیری ذات کی عطاؤں سے پہچانا ہے۔سورج کا اجالا،یہ فضائیں ، خلا، چاند ستاروں کی چمک وغیرہ سب اس کے ہونے کا ثبوت ہیں۔ہم نے اللہ کی ذات کو جنگل کی خاموشی میں بھی پایا ہے اور بلند و بالا پہاڑ بھی اس کے وجود کا ثبوت ہیں۔پراسرار گھٹائیں اور سمندروں کا سناٹا اس کے ہونے کا ثبوت دیتے ہیں۔بجلیوں کی چمک اور بادلوں کی کڑک اللہ کے وجود کی گواہی دیتے ہیں۔وہی ذات ہے جو مٹی میں سے اناج اور طرح طرح کے خزانے مہیا کرتا ہے۔ شاعر کہتا ہے کہ ہم نے اس ذات کو برسات ، طوفان ،پانی ،ہوا ہر ایک چیز کے وجود سے پہچانا ہے۔
گلشن کی بہاروں سے، تو کلیوں کی حیا سےمعصوم سی روتی ہوئی شبنم کی ادا سےلہراتی ہوئی باد سحر، باد صبا سےہر رنگ کے ہر شان کے پھولوں کی قبا سےچڑیوں کے چہکنے سے تو بلبل کی نوا سےموتی کی نزاکت سے تو ہیرے کی جلا سےہر شے کے جھلکتے ہوئے فن اور کلا سےہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
اس بںد میں شاعر کہتا ہے کہ کسی جگہ پر باغ کی بہاریں اس ذات کے وجود کا ثبوت ہیں تو کہیں کلیوں کے شرمانے سے اور کہیں شبنم کی اداؤں سے اس ذات کو پہچانا ہے۔ جب ہوا لہراتی ہوئی آتی ہے اور یہ باد سحر بادِ نسیم بن جاتی ہے اور ہر رنگ اور شان کے پھولوں سے اس ذات کو پہچانا ہے۔ اس کے ہونے کی گواہی چڑیوں کی چہچہاہٹ اور بلبل کی صدا دیتی ہے۔موتی کی نزاکت اور ہیرے کی چمک اللہ کی ذات کے وجود کی گواہ ہے۔اس دنیا میں موجود ہر ایک چیز کا فن اور کلا اللہ کی موجودگی کی گواہ ہیں اور اس رب کی اسی عطا سے ہم نے اس ذات کو پہچانا ہے۔
دنیا کے حوادث سے ، وفاؤں سے، جفا سےرنج و غم و آلام سے، دردوں سے، دوا سےخوشیوں سے، تبسم سے، مریضوں کی شفا سےبچوں کی شرارت سے تو ماؤں کی دعا سےنیکی سے، عبادات سے، لغزش سے، خطا سےخود اپنے ہی سینے کے دھڑکنے کی صدا سےرحمت تیری ہر گام پہ دیتی ہے دلاسےہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
اس بند میں شاعر کہتا ہے کہ اس دںیا میں رونما ہونے والے تمام حادثات ،وفاؤں اور جفا سے اس ذات کی پہچان ہوتی ہے.ہمیں پہنچنے والی کوئی بھی تکلیف ، دکھ ، درد اور اس کی دوا ہمیں کسی ذات کے ہونے کا ثبوت دیتی ہے۔ہماری خوشیوں ، تکالیف اور مریضوں کو ملنے والی شفا بھی ہمیں کسی ذات کے وجود کا احساس دلاتی ہے اور وہی ذات اللہ کی ذات ہے۔کہیں چھوٹے چھوٹے بچوں کی شرارتیں اور کہیں ماں کی دعائیں کسی کی نیکی ، عبادت اور غلطیاں اور ان سب سے پڑھ کر ہمارے اپنے سینے کی دھڑکن ہی ہمیں اللہ کی ذات کے وجود کا احساس دلاتی ہے۔ اللہ کی ذات کی رحمت ہر لمحہ ہمیں دلاسے دیتی ہےکیونکہ اس کی عطا سے ہی ہم نے اس ذات کو پہچانا ہے۔

دیے گئے سوالات کے جواب لکھیں۔
حمد میں شامل اُن مظاہر قدرت کا ذکر کریں جن سے انسان بلا واسطہ فائدہ اُٹھاتا ہے۔
انسان سورج کی روشنی ، ستاروں کی چمک، ہوا ، پانی وغیرہ سے بلا واسطہ فائدہ اٹھاتا ہے۔
پہاڑوں کی انا ” سے کیا مراد ہے؟
پہاڑوں کی انا سے مراد بلند و بالا پہاڑوں کا تن کر کھڑا ہونا ہے جنھیں اللہ کی ذات کے سوا کوئی جھکا نہیں سکتا۔
حمد میں پرندوں کا ذکر کس انداز میں کیا گیا ہے؟
حمد میں چڑیوں کی چہچہاہٹ اور بلبل کی نوا کے طور سے پرندوں کا ذکر کیا گیا ہے۔ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے،حمد کی روشنی میں اس مصرعے کی وضاحت کریں۔ہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے مراد ہے کہ شاعر اللہ کی ذات کو مخاطب کرکے کہتا ہے کہ ہم نے تجھے تیری رحمتوں اور بے پناہ عطاؤں سے پہچانا ہے۔
اللہ تعالی کی رحمت ہمیں ہر قدم پر کس طرح دلاسا دیتی ہے؟
اللہ کی رحمت ہمیں ہر قدم پر ہمارے ساتھ ہونے کا احساس دلا کر ہمیں ہر قدم پر دلاسا دیتی ہے۔
مظاہر فطرت کس طرح اللہ تعالی کی قدرت کی نشانیاں ہیں؟
مظاہر فطرت وہ عناصر ہیں جو ایک انسان کے بس سے باہر ہیں جب ہم ان نعمتوں سے فائدہ حاصل کرتے ہیں تو ہم پر اللہ کی قدرت کے بھید کھلتے ہیں۔ ان کے تخلیق کرنے والے کا احساس دلاتا ہے۔
سنیے اور بولیے:

جنگل کی خموشی سے، پہاڑوں کی انا سے
پر ہول سمندر سے، پر اسرار گھٹا سے
چڑیوں کے چہکنے سے تو بلبل کی نوا سے
موتی کی نزاکت تو ہیرے کی جلا سے
نیکی سے عبادات سے لغزش سے خطا سے
خود اپنے ہی سینے کے دھڑکنے کی صدا سے

مندرجہ ذیل نظم پارے کو چند طلبہ درست تلفظ ، آہنگ اور حرکات و سکنات کے ساتھ پڑھیں اور اساتذہ کرام طلبہ سے آخر میں دیے گئے زبانی سوالات پوچھیں۔
سورج کے اجالوں سے، فضاؤں سے ، خلا سےچاند اور ستاروں کی چمک اور ضیا سےجنگل کی خموشی سے، پہاڑوں کی انا سےپرہول سمندر سے ، پراسرار گھٹا سےبجلی کے چمکنے سے ، کڑکنے کی صدا سےمٹی کے خزانوں سے، اناجوں سے، غذا سےبرسات سے، طوفان سے، پانی سے، ہوا سےہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
شاعر نے کس کے اُجالوں سے اپنے رب کو پہچانا؟
شاعر نے سورج کے اجالوں سے اپنے رب کو پہچانا۔
پر ہول سمندر سے کیا مراد ہے؟
پر ہول سمندر سے مراد لہراتا ہوا خطرناک سمندر ہے۔
زمین میں اللہ نے کیا کیا خزانے چھپارکھے ہیں؟
زمین میں اللہ تعالیٰ نے اناج ، قیمتی موتی ، دھاتیں ، تیل وغیرہ جیسے خزانے چھپا رکھے ہیں۔کوئی سے دوخزانوں کا ذکر کریں۔
تیل ، اناج
زبان سیکھیے:
صفت عددی ، صفت ذاتی اور صفت نسبتی کی مزید دو دو مثالیں لکھیں۔

صفت عددی:
پانچ کلو گھی ، بارہ انڈے ، دو دن۔

صفف ذاتی:
کمزور لڑکی، اچھی لڑکی، برا آدمی۔

صفت نسبتی:
ایمن آبادی برفی ، گورکھپوری۔

سوچیے اور لکھیے۔
اس حمد کا خلاصہ اپنے الفاظ میں تحریر کریں۔
اس نظم میں شاعر نے اللہ کی ذات کی تعریف کی ہے اور شاعر کہتا ہے کہ اس ذات کو ہم نے اس کی عطاؤں کے ذریعے پہچانا ہے۔ سورج کا اجالا،یہ فضائیں ، خلا، چاند ستاروں کی چمک وغیرہ سب اس کے ہونے کا ثبوت ہیں۔ہم نے اللہ کی ذات کو جنگل کی خاموشی میں بھی پایا ہے اور بلند و بالا پہاڑ بھی اس کے وجود کا ثبوت ہیں۔پراسرار گھٹائیں اور سمندروں کا سناٹا اس کے ہونے کا ثبوت دیتے ہیں۔بجلیوں کی چمک اور بادلوں کی کڑک اللہ کے وجود کی گواہی دیتے ہیں۔وہی ذات ہے جو مٹی میں سے اناج اور طرح طرح کے خزانے مہیا کرتا ہے۔
شاعر کہتا ہے کہ ہم نے اس ذات کو برسات ، طوفان ،پانی ،ہوا ہر ایک چیز کے وجود سے پہچانا ہے۔کہ کسی جگہ پر باغ کی بہاریں اس ذات کے وجود کا ثبوت ہیں تو کہیں کلیوں کے شرمانے سے اور کہیں شبنم کی اداؤں سے اس ذات کو پہچانا ہے۔ جب ہوا لہراتی ہوئی آتی ہے اور یہ باد سحر بادِ نسیم بن جاتی ہے اور ہر رنگ اور شان کے پھولوں سے اس ذات کو پہچانا ہے۔ اس کے ہونے کی گواہی چڑیوں کی چہچہاہٹ اور بلبل کی صدا دیتی ہے۔موتی کی نزاکت اور ہیرے کی چمک اللہ کی ذات کے وجود کی گواہ ہے۔
اس دنیا میں موجود ہر ایک چیز کا فن اور کلا اللہ کی موجودگی کی گواہ ہیں۔اس دںیا میں رونما ہونے والے تمام حادثات ،وفاؤں اور جفا سے اس ذات کی پہچان ہوتی ہے.ہمیں پہنچنے والی کوئی بھی تکلیف ، دکھ ، درد اور اس کی دوا ہمیں کسی ذات کے ہونے کا ثبوت دیتی ہے۔ہماری خوشیوں ، تکالیف اور مریضوں کو ملنے والی شفا بھی ہمیں کسی ذات کے وجود کا احساس دلاتی ہے اور وہی ذات اللہ کی ذات ہے۔کہیں چھوٹے چھوٹے بچوں کی شرارتیں اور کہیں ماں کی دعائیں کسی کی نیکی ، عبادت اور غلطیاں اوران سب سے پڑھ کر ہمارے اپنے سینے کی دھڑکن ہی ہمیں اللہ کی ذات کے وجود کا احساس دلاتی ہے۔ اللہ کی ذات کی رحمت ہر لمحہ ہمیں دلاسے دیتی ہےکیونکہ اس کی عطا سے ہی ہم نے اس ذات کو پہچانا ہے۔
نظم اور شاعر کا حوالہ دیتے ہوئے درج ذیل بند کی تشریح کریں۔
گلشن کی بہاروں سے، تو کلیوں کی حیا سےمعصوم سی روتی ہوئی شبنم کی ادا سےلہراتی ہوئی باد سحر، باد صبا سےہر رنگ کے ہر شان کے پھولوں کی قبا سےچڑیوں کے چہکنے سے تو بلبل کی نوا سےموتی کی نزاکت سے تو ہیرے کی جلا سےہر شے کے جھلکتے ہوئے فن اور کلا سےہم نے تجھے جانا ہے فقط تیری عطا سے
یہ بند حمد نظم میں سے لیا گیا ہے۔ اس بند میں شاعر کہتا ہے کہ کسی جگہ پر باغ کی بہاریں اس ذات کے وجود کا ثبوت ہیں تو کہیں کلیوں کے شرمانے سے اور کہیں شبنم کی اداؤں سے اس ذات کو پہچانا ہے۔ جب ہوا لہراتی ہوئی آتی ہے اور یہ باد سحر بادِ نسیم بن جاتی ہے اور ہر رنگ اور شان کے پھولوں سے اس ذات کو پہچانا ہے۔ اس کے ہونے کی گواہی چڑیوں کی چہچہاہٹ اور بلبل کی صدا دیتی ہے۔موتی کی نزاکت اور ہیرے کی چمک اللہ کی ذات کے وجود کی گواہ ہے۔اس دنیا میں موجود ہر ایک چیز کا فن اور کلا اللہ کی موجودگی کی گواہ ہیں اور اس رب کی اسی عطا سے ہم نے اس ذات کو پہچانا ہے۔
مندرجہ ذیل اشعار کی نشان دہی کریں کہ کون سا شعر حمد کا ، نعت کا اور ملی نغمے کا ہے۔
وہ نبیوں میں رحمت لقب پانے والامرادیں غریبوں کی بر لانے والا
یہ شعر نعتیہ شعر ہے۔
کس سے کہوں دل کا بیاں تیرے سوا،میرے خداکوئی نہیں سنتا یہاں، تیرے سوا، میرے خدا
یہ شعرحمد یہ شعر ہے۔
کہتی ہے یہ راہ عمل، آو ہم سب ساتھ چلیںمشکل ہو یا آسانی ہاتھ میں ڈالیں ہاتھ چلیں
یہ شعرملی نغمے کا شعر ہے۔

0 0 votes
Article Rating
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
Ilmu علمو
0
Would love your thoughts, please comment.x
()
x